5جی ٹیکنالوجی کی آمد متوقع----یہ فاصلوں کو کم کرنے کے لئے زبردست ثابت ہوگی

5جی ٹیکنالوجی بارے—-پاکستانیوں کے لئے زبردست خبر

ٹيکنالوجی کی دنيا ميں ٹيلی فونک رابطوں کی ابتدا 1جی سے ہوئی۔ جب ابِنِ آدم پہلی بار ٹیلی فون کے ذریعے ایک دوسرے کی آواز سننے کے قابل ہوا، پھر اس ٹیکنالوجی میں مزید پیش رفت واقع ہوئی اور پیغامات کی رسائی کے لیے آواز کی بجا ئے جدید طرز کے خطوں کا استعمال کیا جانے لگا۔ جن کے لیے نہ تو کاغذ اور قلم درکار تھے، نہ ہی کوئی ڈاک خانہ اور ڈاکیا۔ یعنی اب آپ بغیر بولےلکھ کر اپنا پیغام ایک جگہ سے دوسری جگہ پہنچا سکتے تھے وہ بھی چند سیکنڈوں میں، جی ہاں! یہی وہ دور تھا جب گھروں اور دفتروں میں رکھے ٹیلی فونوں کی جگہ ہاتھوں میں پکڑے موبائل فونوں نے لے لی۔ وائر لیس ٹیکنالوجی کے اس ابتدائی دور کو 2جی کا نام دیا گیا۔
روابط قائم کرنے کی یہ دوڑ یہی ختم نہیں ہوئی انٹر نیٹ کی آمد ٹیکنالوجی کے دور کا ایک نیا آغاز ثابت ہوا جب 3جی متعارف ہوا۔ 3جی کی بدولت نہ صرف سات سمندر پار پیغامات کی رسائی ممکن ہوئی بلکہ ساتھ ہی ساتھ دنیا ایک عالمی گاؤں کی شکل اختیار کرگئی، جہاں گھر بیٹھے بیرون ملک کی خبریں سننے کے ساتھ ساتھ دیکھی بھی جا سکتی تھی، لیکن انسانی فطرت میں زیادہ کی خواہش ہمیشہ سے پائی گئی ہے- اسی خواہش کا نتیجہ ہے 4جی۔ آج جو دنیا میں فاصلے نہ ہونے کے برابر رہ گئے ہیں یہ اسی 4جی کی مرہون منت ہے۔ معلومات کا تیز ترین بہاؤ،دُور دراز علاقوں میں لوگوں کی تصاویری بات چیت، بیرونِ ملک کاروباری معاملات ان سب کے پیچھے جو ٹیکنالوجی بروۓ کار لائی جا رہی ہے وہ 4جی ہے۔
لیکن بات یہیں ختم نہیں ہوتی 4جی کے بعد سائنسدان جس ٹیکنالوجی کو وجود میں لانے کے لیے کوشاں ہیں وہ 5جی ہے۔ایسا خیال کیا جاتا ہے 5جی کی رفتار 4جی سے دس گنا زیادہ ہو گی۔ آج جو فلمیں موبائل میں محفوظ ہونے کے لیے گھنٹوں لگاتی ہیں 5جی کی بدولت چند سیکنڈوں کی دوری پر ہیں۔ 5جی بنیاد ثابت ہو گا قیاسی حقیقت کی۔ جس سے یہ تاثر دیا جا سکتا ہے کہ وہ انسان جس سے بات چیت کی جا رہی ہے وہ اس وقت یہی موجود ہے،یہ تصاویری بات چیت کا اگلا مرحلہ ہے یا آپ کہہ سکتے ہیں نظر کا دھوکہ۔ اس کے علاوہ ایسی بہت سی خصوصیات کی حامل ثابت ہو گی یہ نئی ٹیکنالوجی انہی میں سے ایک ہے خودمختار گاڑیاں، جن کو چلانے کے لیے کسی انسان کی ضرورت نہیں ہو گی اور جو خود بخود آپ کو ایک جگہ سے دوسری جگہ لے جانے کے قابل ہو گی۔ آپ کو صرف گاڑی کی آرام دہ سیٹوں پر بیٹھنا ہے اور اپنے سفر سے لطف اندوز ہونا ہے۔ اس ٹیکنالوجی کا استعمال زراعت، طب، صنعت اور کئی مشینی آلات بنانے کے لیے بھی کیا جا سکے گا۔ نہ صرف یہ بلکہ 4جی کی نسبت 5جی کا انسانی ہدایات کے نتائج اخذ کرنے کا وقت پلک جھپکنے سے 400 گنا تک زیادہ ہو سکتا ہے۔ سائنسدانوں کا خیال ہے کہ 1جی سے 4جی تک ٹیکنالوجی میں جتنی بھی پیش رفت واقع ہوئی ہے اگر ان سب کی خصوصیات کو اکٹھا کیا جائے تو 5جی کا وجود میں آنا ممکن ہے۔ موجودہ حالات کے پیش نظر اگلے پانچ سالوں میں 5جی کی آمد متوقع ہے۔