نیا پاکستان ہاؤسنگ سکیم کے آن لائن فارمز بائیس اکتوبر سے ا کیس دسمبر تک جمع کروائے جاسکیں گے

نیا پاکستان ہاؤسنگ سکیم کے آن لائن فارمز جمع کروانے کی آخری تاریخ کون سی ہے اور فارم کہاں سے ملے گا؟

وزیراعظم عمران خان نے دس اکتوبر بروز بدھ کو اسلام آباد میں نیا پاکستان ہاؤسنگ اتھارٹی کے قیام کا آغاز کیا اور اس موقع پر انھوں نے کہا کہ لوگوں کو بس تھوڑی دیر مشکلات کا سامنا کرنا پڑے گا ۔میں لوگوں کو مشکل وقت سے گزار کر انھیں آسانی کی طرف لے کر آؤں گا ۔انھوں نے کہا کہ میں لوگوں کے سامنے ایک ہاؤسنگ اسکیم لے کر آرہا ہوں ہاؤسنگ ایک ایسی انڈسٹری ہے جس سے سارا ملک چلتا ہے اس پالیسی سے ملک میں خوشحالی آئےگی ۔
وزیراعظم عمران خان نے گیارہ اکتوبر کو اسلام آباد میں نیا پاکستان ہاؤسنگ اتھارٹی کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں سالانہ دس ارب ڑالر کی منی لانڈرنگ ہورہی ہے اگر ملک میں منی لانڈرنگ نہ ہوتی تو ہمیں قرض نہ لینا پڑتا ،اس لیے قرضوں کی قسطیں ادا کرنے کے لیے پیسہ چاہیے۔ اور ہم اپنے اداروں کو ٹھیک کر رہے ہیں اور اس کے نتائج چھ ماہ بعد آئیں گے۔ پاکستان پچھلی حکومت سے خسارہ تحفہ میں لے چکا ہے اس لیے ہمارے پاس دو راستے تھے ایم آئی ایف اور دوست ممالک سے مدد۔ انھوں نے کہا کہ پاکستان میں وسائل بہت ہیں لیکن گڈ گورننس نہیں ہے۔
وزیراعظم نے کہا کہ یہ اتھارٹی ہمیں ون ونڈو آپریشن دے گی اوراسے میں مانیٹر کروں گا ۔جبکہ اس اسکیم سے پرائیویٹ پبلک پارٹنر شپ بھی کریں گے۔
وزیراعظم نے کہا کہ ملک میں بے روزگاری بہت ہے اور عام آدمی گھر لینے کا سوچ بھی نہیں سکتا اس اسکیم سے ساٹھ لاکھ نوجوانوں کو روزگار ملے گا اور چالیس صنعتیں چلے گی ،ہمارا ٹارگٹ پانچ سالوں میں پچاس لاکھ گھر بنانے کا ہے۔
نیا پاکستان ہاؤسنگ اسکیم کا فارم جاری کر دیا گیا ہے جس کی قیمت دوسو پچاس روپے مقرر ہے اور یہ فارم نادرا ویب سائٹ سےڈاؤن لوڈ کر سکتے ہیں۔ ترجمان نادرا کے مطابق اب تک فارم دو لاکھ لوگوں نےڈاؤن لوڈ کیے ہیں ،جبکہ پہلے گھنٹے میں باسٹھ ہزار فارم ڈاؤن لوڈ ہوئے ہیں ۔وزیراعظم کے مطابق فارمز 22 اکتوبر سے 21 دسمبر تک جمع کروائیں جاسکیں گے۔
اس ہاؤسنگ اتھارٹی کے قیام سےلوگوں کی طرف سے شاندار پذیرائی دیکھنے میں آئی ہےاور اس اسکیم کے تحت ہر طبقے کے لوگوں کو فوری طور پر رہائش کی سہولیات میسر آسکیں گی ۔عوام کوآسان اقساط پر مناسب قیمت پر اپنا گھر مل سکے گاجس میں گیس ،بجلی ،پانی اوربہترین رہائش کی سہولیات میسر آسکیں گی۔ اور انھوں نے کہا کہ پاکستان کے لوگوں کو رہائشی سہولیات کی فراہمی حکومت کی اولین ترجیح وذمہ داری ہے اس لیے پچاس لاکھ گھروں کا پراجیکٹ شروع کیا ہے۔
وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ اس ہاؤسنگ اسکیم میں ملک بھر کے اضلاع کو شامل کیا جائےگا جس کے پہلے مرحلے میں اسلام آباد ،گلگت، سوات ،مظفر آباد، سکھر، کوئٹہ اور فیصل آباد شامل ہیں اور اس اسکیم میں کچی آبادیوں کا بھی ریکارڈ اکٹھا کیا جائے گااور ان کچی آبادیوں پر کثیر المنزلہ عمارتیں بنائیں گے اور اس پر کام نوے دنوں کے اندر شروع کیا جائے گا ۔جس میں تین ،پانچ اور سات مرلہ کے گھر ہیں جو پندرہ سے بیس سال کی اقساط میں دیے جائیں گے۔ اس اسکیم سے عام لوگوں میں خوشی کی لہر دوڑ گئی ہے۔